Fatwa: # 46338
Category: Business Matters
Country: African Country
Date: 16th October 2020

Title

chit fund (Mutual assistance fund) - Is it permissible?

Question

Aslm. Kemcho Muftī ? had a question.

5 people contribute 200kwacha each to the pool. After drawing lots, one individual takes the k1000 and may do as he wishes. At the completion of one month, he then gives the k1000 to the next person. Like this each of the partners uses the k1000 for a month. Is this scheme permissible? Jazakalahu khyrah

Answer

In the Name of Allah, the Most Gracious, the Most Merciful.

As-salāmu ‘alaykum wa-rahmatullāhi wa-barakātuh.

A chit fund (Mutual assistance fund) is a fund where a number of individuals pool their money. The money is then given to one person by drawing lots or through mutual consent. Participating in this type of fund will be permissible as long there are no elements of interest. The rulings of interest apply because a chit fund is somewhat a borrowing scheme where some members act as creditors and the individual given the money acts as a debtor. The creditors give the debtor a time limit in which he may benefit from the lump sum amount and then return the money to the pool. Therefore, keeping the above in mind, the scheme in reference will be permissible.[i]

And Allah Ta’āla Knows Best

Ikraam Elias Gangat

Student Darul Iftaa
Zambia

Checked and Approved by,
Mufti Ebrahim Desai.

 


کتاب الفتاوی  ج-٥  ص-٣٣٧  (زمزم پبلشرز)  [i]

سوال: - کیا ہراج کی چٹھی کا کاروبار جائز ہے؟

جواب : - ایک چٹھی جس میں بعض لوگ نقصان اٹھا کر چٹھی کی رقم لے لیتے ہیں ، جائز نہیں ، بلکہ سود میں دال ہے ، ہاں ! اگر ہر ماہ ایک شخص چٹھی کی رقم لے، اور پھٹی کی رقم برابر لی جاۓ درست ہے ۔

 

جديد فقہی مسائل ج-١ ص-٢٤٩ (زمزم پبلشرز)

( CHITFUND )

اس کی صورت یہ ہوتی ہے کہ ایک خاص رفم متعین ہوتی ہے ۔ چند افرد اس کی ممبر بنتے ہیں ۔ وہ مقررہ تناسب کے مطابق ہر ماہ رقم ادا  کرتے ہیں اور مجموعي رقم ہر ماه قرعہ اندازى يا باہمی اتفاق رائے سے کسی ایک کو دے دی جاتی ہے ۔ مثال دو ہزارکی چٹھی ہوں دس آدمی شریک ہوں تو دس ماہ تک ہر شخص دو سو روپے جمع کرے اور ہر بار کی ایک کو یکمشت یہ رقم مل جایا کرے گی ۔

 

یہ صورت مباح ہے ، اس لئے کہ اس کے نا درست ہونے کی کوئی وجہ نہیں ہے ۔ جو شخص مدت کی تکمیل سے پہلے  چٹھی کی رقم حاصل کرتا ہے اس کی حیثیت مقروض کی ہے اور دوسرے ارکان کی قرض دہندہ کی. قرض دینے والا اس کو ایک مدت کی مہلت دیتا ہے ۔ اس طرح کہ اس پر کوئی نفع حاصل نہیں کرتا ، یہ نہ صرف جائز ہے بلکہ انسانی ہمدردی اور اسلامی اخلاق کا تقاضا بھی ہے ۔

 

چٹ فنڈ یا چٹھی کے اسلامی احکام ص-١٠ (مکتبہ مسیح الامت دیوبند بنگلور)

 

 - چٹ فنڈ میں جس کو رقم مل جاتی ہے ، اس کی حیثیت مقروض کی ہے اور دیگر  ممبران کی حیثیت قرض دہندہ کی ہے ۔

 

- چٹ فنڈ میں شریک تمام ممبران آپس میں ایک دوسرے کے لیے مقروض وقرض دہندہ کی رہتی ہے ۔

 

- ہر اس کی وہ چٹھی جس میں نہ مالی نقصان ہو اور نہ مالی فائدہ ہو ، جائز ہے

 

-  یہ صورت مباح ہے ؛ اس لیے کہ اس کا نا درست ہونے کی کوئی وجہ نہیں ہے ، جو خاص مدت کی تکمیل سے پہل چھٹی کی رقم حاصل کرتا ہے ۔ اس کی حیثیت مقروض کی ہے اور دوسرے ارکان کی قرض دہندہ کی ۔ قرض دینے والا اس کو ایک مدت کی مہلت دیتا ہے ۔ اس طرح کہ اس پر کو کئی نفع حاصل نہیں کرتا ، یہ نہ صرف یہ کہ جائز ہے ؛ بل کہ انسانی ہمدردی اور اسلامی اخلاق کا تقاضا بھی ہے 

DISCLAIMER - AskImam.org questions
AskImam.org answers issues pertaining to Shar'ah. Thereafter, these questions and answers are placed for public view on www.askimam.org for educational purposes. However, many of these answers are unique to a particular scenario and cannot be taken as a basis to establish a ruling in another situation or another environment. Askimam.org bears no responsibility with regards to these questions being used out of their intended context.
  • The Shar's ruling herein given is based specifically on the question posed and should be read in conjunction with the question.
  • AskImam.org bears no responsibility to any party who may or may not act on this answer and is being hereby exempted from loss or damage howsoever caused.
  • This answer may not be used as evidence in any Court of Law without prior written consent of AskImam.org.
  • Any or all links provided in our emails, answers and articles are restricted to the specific material being cited. Such referencing should not be taken as an endorsement of other contents of that website.
The Messenger of Allah said, "When Allah wishes good for someone, He bestows upon him the understanding of Deen."
[Al-Bukhari and Muslim]