Fatwa: # 41517
Category: Divorce (Talaaq)
Country: Pakistan
Date: 13th February 2019

Title

Divorce in extreme anger/IED - Guidance needed from Respected Shaykh

Question

Divorce in extreme anger - Guidance needed from Respected Shaykh

Assalaamu Aleikum: Respectable Shaykh (may Allah keep you blessed). My husband often becomes angry, over little matters. He suffers a disease, with name IED (Intermittent Explosive Disorder)۔ . In this state, he starts abusing loudly, beating, and breaking things (like mobile, fan, keyboard, furniture etc). He has already given me two revocable divorces at two different occasions, in anger but not so severe. Now, one day, due to a hot exchange of abuses and insulting, his anger reached to a great extreme. The anger was so much intense that he forgot the first characters of the names of his elder brother and brother-in-law, and failed to find their names in mobile. In such a fit of anger, he could not control himself, and abruptly uttered the word of divorce to me three times, without thinking what he is saying, and what are the implications of those words.  But after a few minutes, when he came into his senses, only then he realized, and regretted, what words he had uttered, and what are their implications. Now kindly guide me, from the teachings of Islamic Sharia, what is the ruling on the divorce given in such an extreme fit of anger?

Answer

In the Name of Allah, the Most Gracious, the Most Merciful.

As-salāmu ‘alaykum wa-rahmatullāhi wa-barakātuh.

Sister in Islam,

We sympathize with you in your predicament.

A similar question has been answered previously, Fatwa #Link, #48 and #41570.  [i] [ii]

You may refer to your local Mufti and present the exact situation to him. He will analyze the situation of the husband at the time of issuing the divorces and advise accordingly.

You may show the references of this fatwa to the Mufti. [iii] [iv]

And Allah Ta’āla Knows Best

Mirza Mahmood Baig

Student Darul Iftaa

Jeddah, KSA

Checked and Approved by,
Mufti Ebrahim Desai.

 ______


[i] Talaaq issued under IED (Intermittent Explosive Disorder)

Question

Assalaamu Aleikum: Respectable Shaykh (may Allah keep you blessed). My husband often becomes angry, over little matters. He suffers a disease, with name IED (Intermittent Explosive Disorder)۔ . In this state, he starts abusing loudly, beating, and breaking things (like mobile, fan, keyboard, furniture etc). Now, one day, due to a hot exchange of abuses and insulting, his anger reached to a great extreme. The anger was so much intense that he forgot the first characters of the names of his elder brother and brother-in-law, and failed to find their names in mobile. In such a fit of anger, he could not control himself, and abruptly uttered the word of divorce to me three times, without thinking what he is saying, and what are the implications of those words.  But after a few minutes, when he came into his senses, only then he realized, and regretted, what words he had uttered, and what are their implications. Now kindly guide me, from the teachings of Islamic Sharia, what is the ruling on the divorce given in such an extreme fit of anger?   

Answer

In the Name of Allah, the Most Gracious, the Most Merciful.
As-salāmu ‘alaykum wa-rahmatullāhi wa-barakātuh.

Sister in Islam,

We sympathize with you in your predicament.

You state your husband uttered the word of divorce thrice and recalled himself having uttered the divorce three times.

The three divorces issued to you are valid and constitutes a Talaaq-e-Mughallazah (a permanently irrevocable divorce). Therefore, your marriage has terminated. You are no longer husband and wife. [i] [ii]

And Allah Ta’āla Knows Best

Checked and Approved by,
Mufti Ebrahim Desai.

 

[ii] Askimam.org

ID: 41570


[i] الدر المختار وحاشية ابن عابدين (رد المحتار) (3/ 244) 

مطلب في طلاق المدهوش وقال في الخيرية: غلط من فسره هنا بالتحير، إذ لا يلزم من التحير وهو التردد في الأمر ذهاب العقل. وسئل نظما فيمن طلق زوجته ثلاثا في مجلس القاضي وهو مغتاظ مدهوش، أجاب نظما أيضا بأن الدهش من أقسام الجنون فلا يقع، وإذا كان يعتاده بأن عرف منه الدهش مرة يصدق بلا برهان. اهـ. قلت: وللحافظ ابن القيم الحنبلي رسالة في طلاق الغضبان قال فيها: إنه على ثلاثة أقسام: أحدها أن يحصل له مبادئ الغضب بحيث لا يتغير عقله ويعلم ما يقول ويقصده، وهذا لا إشكال فيه. والثاني أن يبلغ النهاية فلا يعلم ما يقول ولا يريده، فهذا لا ريب أنه لا ينفذ شيء من أقواله

الثالث من توسط بين المرتبتين بحيث لم يصر كالمجنون فهذا محل النظر، والأدلة على عدم نفوذ أقواله. اهـ. ملخصا من شرح الغاية الحنبلية، لكن أشار في الغاية إلى مخالفته في الثالث حيث قال: ويقع الطلاق من غضب خلافا لابن القيم اهـ وهذا الموافق عندنا لما مر في المدهوش

 

فتاؤي محمؤديه   جلد ١٨  ص١٤٨-١٦٤ مكتبه محمؤديه

کتاب النو ازل جلد ٩ صفحہ ٢٠٣

کتاب الفتاوی جلد   ٥صفحہ ٤٢

فتاوی قاسمیہ جلد١٥  صفحہ ٣٣٩،٣٤٦

خوشی میں کوئی طلاق نہیں دیتاہے؛ بلکہ غصہ ہی میں طلاق دی جاتی ہے؛ لہٰذا جب آپ نے اپنی بیوی کو تین طلاقیں دی ہیں، توبیوی پر طلاق مغلظہ واقع ہوکر آپ کے اوپر وہ قطعی طور پر حرام ہوچکی ہے، آئندہ بغیر حلالہ کے اس کے ساتھ نکاح بھی درست نہیں ہے اور حلالہ کاطریقہ یہ ہے کہ وہ عدت گذار کر کسی دوسرے مرد سے نکاح کرے، پھر اس مرد کے ساتھ ہمبستری ہونے کے بعد وہ مرد طلاق دیدے اور پھر عدت بھی گذرجائے تو وہ بیوی آپ کے لئے حلال ہوسکتی ہے اور پھر آپ اس سے نکاح کرسکتے ہیں۔ 

 

2الهداية في شرح بداية المبتدي (2/ 257) 

وإن كان الطلاق ثلاثا في الحرة أو ثنتين في الأمة لم تحل له حتى تنكح زوجا غيره نكاحا صحيحا ويدخل بها ثم يطلقها أو يموت عنها " والأصل فيه قوله تعالى: {فَإِنْ طَلَّقَهَا فَلا تَحِلُّ لَهُ مِنْ بَعْدُ حَتَّى تَنْكِحَ زَوْجاً غَيْرَهُ} [البقرة: 230]

 

الفتاوى الهندية - ط. دار الفكر (1/ 473)

وَإِنْ كان الطَّلَاقُ ثَلَاثًا في الْحُرَّةِ وَثِنْتَيْنِ في الْأَمَةِ لم تَحِلَّ له حتى تَنْكِحَ زَوْجًا غَيْرَهُ نِكَاحًا صَحِيحًا وَيَدْخُلَ بها ثُمَّ يُطَلِّقَهَا أو يَمُوتَ عنها كَذَا في الْهِدَايَةِ وَلَا فَرْقَ في ذلك بين كَوْنِ الْمُطَلَّقَةِ مَدْخُولًا بها أو غير مَدْخُولٍ بها كَذَا في فَتْحِ الْقَدِيرِ وَيُشْتَرَطُ أَنْ يَكُونَ الْإِيلَاجُ مُوجِبًا لِلْغُسْلِ وهو الْتِقَاءُ الْخِتَانَيْنِ هَكَذَا في الْعَيْنِيِّ شَرْحِ الْكَنْزِ أَمَّا الْإِنْزَالُ فَلَيْسَ بِشَرْطٍ لِلْإِحْلَالِ

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 

[iii]  ماہنامہ دار العلوم دیوبند شعبان رمضان 1438ہجری مطابق مئی جون2017ء
- مؤلف : دار العلوم دیوبند الہند

- ناشر : www.darululoom-deoband.com

غصہ میں طلاق
غصہ کے تین درجات ہیں:

(۱) ابتدائی درجہ یہ ہے کہ اس میں عقل کے اندر کوئی تغیر اور فتور نہیں آتا، جو کچھ کہتا ہے اپنے ارادہ سے کہتا ہے اور اس کو سمجھتا ہے، اس صورت میں اس کی باتیں عام لوگوں کی باتوں کی طرح شرعاً معتبر ہیں اور اس کی طلاق واقع اور نافذ ہوگی۔
(۲) اعلیٰ اور انتہائی درجہ یہ ہے کہ غصہ اس حد تک پہنچ جائے کہ اسے اپنے اقوال وافعال کی کوئی خبر نہ رہے۔ یہ صورت بے ہوشی اور جنون کی طرح ہے۔ ایسے شخص کے اقوال وافعال معتبر نہیں اور اس کی دی ہوئی طلاق واقع نہیں ہوتی۔
(۳) درمیانی درجہ یہ ہے کہ مجنون کی طرح تو نہیں ہوا؛ مگر پہلے درجہ سے بڑھ گیا اور حالت یہ ہو گئی کہ بغیر ارادہ منھ سے الٹی سیدھی باتیں نکلتی ہیں؛ لیکن جو کچھ بولتا ہے اس کا اسے علم و شعور ہوتا ہے۔ اس صورت میں اس کے اقوال وافعال پہلی صورت کی طرح نافذ ومعتبر ہیں اور اس کی طلاق بھی واقع اور نافذ ہے۔

……………………………………………………….

مریض اور معالج کے اسلامی احکام ، ص۱۹۲،۱۹۳، مؤلف : حضرت مولانا مفتی عبد الواحد صاحب، ناشر : مجلس نشریات اسلام کراچی پاکستان

غصہ کی حالت میں دی گئی طلاق
غصہ کی تین حالتیں ہو سکتی ہیں 

-i غصہ کے ابتدائی آثار ہوں ۔ ہوش و حواس پورے طور پر قائم ہوں اور جو کچھ وہ کہتا ہو اس کو وہ جانتا بھی ہو اور اپنے قصد و ارادہ سے کہتا ہو۔ اس حالت میں دی ہوئی طلاق واقع ہوتی ہے۔ 
-ii غصہ اپنی انتہا کو پہنچ گیا ہو اور اس کی وجہ سے آدمی بالکل دیوانہ بن گیا ہو۔ ہوش و حواس قائم نہ رہے ہوں اور اس کو کچھ پتا نہ ہو کہ وہ کیا کہہ رہا ہے اور نہ ہی کہنے میں اس کا قصد و ارادہ ہو۔ اس حالت میں دی ہوئی طلاق واقع نہیں ہوتی۔
-iii مذکورہ بالا دو درجوں کے درمیان کی ایسی حالت ہو کہ ہوش و حواس اور عقل میں خلل واقع ہو جائے اور اس سے وہ شخض اتنا مغلوب ہو جائے کہ اکثر باتیں اور افعال خلاف عادت اس سے صادر ہونے لگیں اگرچہ اتنا ہوش ہو کہ اس کو پتا چل رہا ہو کہ وہ کیا کہہ رہا ہے۔ اس حالت میں دی ہوئی طلاق واقع نہیں ہوتی۔
مسئلہ: جو شخص دہشت زدہ ہو اور اس کی بھی ویسی ہی حالت ہو جائے جو غصہ کی تیسری حالت ذکر ہوئی تو اس کی ایسی کیفیت میں دی ہوئی طلاق واقع نہیں ہوتی۔ (5)
مسئلہ: جس شخص کا نفسیاتی مرض میں مبتلا ہونا ثابت ہو اور وہ محض اس نفسیاتی مرض کے دبائو (Obsession) کے تحت طلاق کہے تو وہ واقع نہ ہو گی۔
مسئلہ: مجنون یعنی پاگل اور دیوانے کی دی ہوئی طلاق واقع نہیں ہوتی۔
مسئلہ: ایک شخص کا نفسیاتی مرض یا جنون میں مبتلا ہونا معروف ہے۔ اس کی بیوی نے دعویٰ کیا کہ اس نے اس کو طلاق کہی ہے اور شوہر کہے کہ وہ تو حالت جنون میں یا نفسیاتی دبائو میں اس نے کہی تھی تو طلاق نہ ہو گی۔(6)
مسئلہ: جو شخص کم فہم ہو اور ملی جلی باتیں یعنی کچھ صحیح اور کچھ بہکی باتیں کرتا ہو اور کام کو صحیح طریقے اور تدبیر سے نہ کرتا ہو اس کو معتوہ کہتے ہیں اور اس کی دی ہوئی طلاق واقع نہیں ہوتی۔

حوالجات
(1) عالمگیری ص 353 ج 1(3,2) رد المحتار ص 460 ج 2 (4) در مختار ص 460 ج 2
(5) ردالمحتار ص 463 ج 2 (6) رد المحتار ص 462 ج 2 

………………………………………………………………………………………..
کتاب النوازل جلد 9

ص۲۰۳
- مؤلف : مولانا مفتی سید محمد سلمان منصور پوری صاحب
- ناشر : المرکز العلمی

 اگر واقعۃ سائل غصہ میں اپنا دماغی توازن کھو بیٹھا تھا اور اب اسے بالکل یاد نہیں ہے کہ اس نے طلاق کا کوئی لفظ کہا ہے، تو ایسی صورت میں اس کی بیوی پر طلاق کا حکم نہیں ہوگا۔
وسئل نظما فیمن طلق زوجتہ ثلاثا في مجلس القاضی وہو مغتاظ مدہوش، فأجاب نظما أیضا بأن الدہش من أقسام الجنون فلا یقع، وإذا کان یعتادہ بأن عرف منہ الدہش مرۃ یصدق بلا برہان … الثاني: أن یبلغ النہایۃ فلا یعلم ما یقول ولا یریدہ، فہذا لاریب أنہ لاینفذ شيء من أقوالہ۔ (شامي ۴؍۴۵۲ زکریا) فقط واﷲ تعالیٰ اعلم

ََََََََََََ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 

اسلام کا مکمل  نظام طلاق، ص۹۲،۹۳

للحاج سید مفتی عبد الجلیل قاسمی

 

[iv]      الدر المختار وحاشية ابن عابدين (رد المحتار) (3/ 244) 

مطلب في طلاق المدهوش وقال في الخيرية: غلط من فسره هنا بالتحير، إذ لا يلزم من التحير وهو التردد في الأمر ذهاب العقل. وسئل نظما فيمن طلق زوجته ثلاثا في مجلس القاضي وهو مغتاظ مدهوش، أجاب نظما أيضا بأن الدهش من أقسام الجنون فلا يقع، وإذا كان يعتاده بأن عرف منه الدهش مرة يصدق بلا برهان. اهـ. قلت: وللحافظ ابن القيم الحنبلي رسالة في طلاق الغضبان قال فيها: إنه على ثلاثة أقسام: أحدها أن يحصل له مبادئ الغضب بحيث لا يتغير عقله ويعلم ما يقول ويقصده، وهذا لا إشكال فيه. والثاني أن يبلغ النهاية فلا يعلم ما يقول ولا يريده، فهذا لا ريب أنه لا ينفذ شيء من أقواله

الثالث من توسط بين المرتبتين بحيث لم يصر كالمجنون فهذا محل النظر، والأدلة على عدم نفوذ أقواله. اهـ. ملخصا من شرح الغاية الحنبلية، لكن أشار في الغاية إلى مخالفته في الثالث حيث قال: ويقع الطلاق من غضب خلافا لابن القيم اهـ وهذا الموافق عندنا لما مر في المدهوش

 

Anger is categorized into 3 stages:

1.      The person in anger is in total control of his state of affairs and knows what he is doing and saying. Talaq given in such a state is valid.

2.      Anger leads the person to insanity and mental thinking is distorted. Talaq is invalid in such a state.

3.      One that is between the above mentioned two stages. i.e. one is not in total control of his state of affairs but does not reach the stage of insanity. There is a difference of opinion on Talaq given in this state, but the most correct opinion is that Talaq will be valid. 

We understand from the above ruling that divorce issued in the state of anger will be invalid if one reached the state of insanity. Divorce is a matter of Halal and Haraam. One should be extra conscious when making decisions regarding Halal and Haram. You should honestly question yourself and think carefully whether you did lose your senses and reached the state of insanity when you issued the divorce or not.

DISCLAIMER - AskImam.org questions
AskImam.org answers issues pertaining to Shar'ah. Thereafter, these questions and answers are placed for public view on www.askimam.org for educational purposes. However, many of these answers are unique to a particular scenario and cannot be taken as a basis to establish a ruling in another situation or another environment. Askimam.org bears no responsibility with regards to these questions being used out of their intended context.
  • The Shar's ruling herein given is based specifically on the question posed and should be read in conjunction with the question.
  • AskImam.org bears no responsibility to any party who may or may not act on this answer and is being hereby exempted from loss or damage howsoever caused.
  • This answer may not be used as evidence in any Court of Law without prior written consent of AskImam.org.
  • Any or all links provided in our emails, answers and articles are restricted to the specific material being cited. Such referencing should not be taken as an endorsement of other contents of that website.
The Messenger of Allah said, "When Allah wishes good for someone, He bestows upon him the understanding of Deen."
[Al-Bukhari and Muslim]