Category: Prayer (Salaat)
Fatwa#: 40208
Asked Country: Greece

Answered Date: Mar 16,2018

Title: Salah query regarding deaf and mute person

Question

بخدمت حضرات مفتیان کرام و علماء عظام

السلام علیکم ورحمتہ اللہ و برکاتہ                

میں سماعت معذور ایک مسلمان ہوں اور اپنے سماعت سے محروم بھائیوں اور بہنوں کے لیے عربی کو متعارف کرانا چاہتا ہوں جس میں سب سے پہلے قرآن کریم اور احادیث مبارکہ کی مناسبت اپنے مسلمان بہن بھائیوں میں پیدا کرنا چاہتا ہوں تاکہ وہ عربی زبان نہ سمجھنے کی وجہ سے اللہ پاک کے احکام اور احادیث مبارکہ کے انوار و برکات سے محروم نہ رہیں۔ اس کے لئے میں عربی زبان کے اصل لفظ کو تو ادا کرنے کی صلاحیت نہیں رکھتا ہوں لیکن اس کے معانی اور مفاھیم کو اپنے اشاروں کی زبان میں عربی لفظ کی مناسبت سے لانا چاہتا ہوں اور اس کے لئے اشاروں کو ترتیب دے رہا ہوں۔ مثال کے طور پر اذکارنماز میں ثناء جو ہم نماز میں پڑھتے ہیں سماعت سے محروم افراد اس کی قرات نہیں کرسکتے۔ اور آپ حضرات کے دیئے گئے ایک فتویٰ کے مطابق قرات ہم پر واجب بھی نہیں ہے۔ ہم میں سے بہت سے افراد عربی الفاظ سیکھنے کی بھی کوشش کرتے ہیں اور کافی حد تک سیکھ بھی لیتے ہیں۔ لیکن میرا مقصد یہ ہے کہ جب کوئی سماعت سے محروم نماز کے لئے کھڑا ہو تو ثناء کے اگر الفاظ عربی میں یاد ہوں تو اپنی استطاعت کے مطابق ان کو بھی ادا کرے۔ لیکن جو ثناء کے اندر مفہوم پایا جارہا ہے جو ہر ہر لفظ کا مطلب اور معنیٰ ہے وہ میرے بنائے گئے اشاروں میں اس کے تصور اور خیالات میں رہے۔ تاکہ وہ دنیا کے خیالات سے نماز میں بچ سکے۔                                                                                                       

 

مختصر یہ کہ میرا مقصد اشاروں کی زبان میں عربی الفاظ کا تعارف اور پہچان کرانا ہے۔     

 

اس کے لئے مختلف اسلامی ممالک کی عربی اشاروں کی زبانوں کا مطالعہ کیا اور جو اشارے بین الاقوامی معیار کے مطابق تھے ان اکٹھا کیا گیا۔ پھر ان اشاروں کا مشاہدہ کیا اور جن اشاروں کا زاویہ تسلی بخش نہیں لگا ہمارے ڈیف سائن لینگونج رسیرچ گروپ نے ان کو نئے سرے سے بنایا یا ان میں ردوبدل کیا جن عربی الفاظ کے اشارے موجود نہ تھے ان کی جگہ پاکسانی اشاروں کی زبان استعمال کی گئی اور ہماے اشاروں کی تصاویر میں مفتیان کرام کی رہنمائی سے شرعی حدود کی مکمل رعایت کی گئی ہے اور الحمدللہ ہمارے تصویری خاکوں میں کوئی شرعی خرابی نہیں ہے۔                                                                        

 

میں اشاروں کی زبان میں عربی الفاظ کے اشارے ترتیب دے رہا ہوں اور اس کے لئے علماء کرام اور مفتیان کرام کی رہنمائی لیتا رہتا ہوں۔                                                        

میں آپ حضرات کے سامنے اپنے بنائے گئے اشاروں کی ایک مثال بھی پیش کرتا ہوں تاکہ میرا مقصد سمجھنے میں آسانی ہو۔ جیسا کہ مسجد میں داخل ہونے کی دعا ہے ’’اللھم افتح لی ابواب رحمتک‘‘ تو اس میں میرا اشارہ اللھم کے لئے آسمان کی طرف اشارہ کرکے لفظ اللہ کو بتارہاہے۔ اور چونکہ عام تصور میں اللہ پاک آسمان پر ہیں تو اس کے لئے اشارہ آسمان کی طرف ایک انگلی اٹھا کر کیا۔ اور اے کا اشارہ نہایت ادب کے ساتھ کسی کو اپنی طرف متوجہ کرنے کو کیا۔                                                                                                

 

’’افتح‘‘ پہلے درخواست، عرض کا اشارہ کیا اور پھر کھولنے کا اشارہ کیا تاکہ ادب ملحوظ رہے۔                                                                                                        

’’لی‘‘ میں پہلے لام کا اشارہ بتایا پھر ی ضمیر متکلم کا اشارہ متکلم نے اپنی انگلی کے ذریعے اپنی طرف کیا۔                                                                                              

’’ابواب‘‘ دروازے کا اشارہ کیا۔                                                                          

’’رحمتک‘‘۔ رحم۔ تیری طرف سے تینوں اشاروں کو یکجا کرکے کیا۔ آپ اس دعا کے اشاروں کو اس ورق کے ساتھ منسلک کئے گئے صفحہ پر ملا خطہ فرماسکتے ہیں۔

 

اب مجھے کچھ حضرات کے اشکالات کا سامنا ہے اور وہ اشکالات سوالات کی صورت میں آپ کے پیش خدمت ہیں۔ امید ہے تسلی بخش جوابات سے مستفید فرمائیں گے۔

 

1. نماز میں دنیا کے خیالات آتے رہتے ہیں ان سے بچنے کے لئے ثناء، سورۃ فاتحہ یا کسی بھی سورۃ کو عربی زبان کے اشاروں میں سوچنے اور ذہین میں لانا جائز ہوگا یا نہیں اور مستحق ثواب ہوں گے یا نہیں؟                                                                           

 

2. نماز کے اندر قیام، رکوع، سجدہ۔ التحیات وغیرہ میں اذکار نماز کے بجائے ان کے بنائے گئے اشاروں کو تصور میں لانا یا سوچنا جائز ہوگا یا نہیں اور مستحق ثواب ہوں گے یا نہیں؟                                                               

 

3. تسمیہ کے بنائے گئے اشاروں کو کرنے سے تسمیہ پڑھنے کے برابر اجرو ثواب و برکات ملیں گے یا نیہں؟                                                                                            

 

4. بالفرض قرآن کریم یا احادیث مبارکہ کے مفہوم و مطالیب کو اشاروں کی زبان میں بنانا یا ادا کرنا جائز ہے۔ تو یہ اشارے بنانے کے لئے یا سیکھنے سکھانے کے لئے کون سے قواعد اور ضوابط کو اختیار کرنا ہوگا۔                                                                               

 

5. بالفرض اشاروں میں قرآن پاک یا احادیث مبارکہ بنانا جائز ہے تو بنانے والوں میں کیا اہلیت درکار ہوں گی۔ مفتی ہو یا عالم دین ہو۔ یا کوئی بھی ڈیف اپنے ترجمان کی مدد سے علماء کرام یا مفتیان کرام سے مشورہ لیتے ہوئے بناسکتا ہو۔                                                       

Answer

In the Name of Allah, the Most Gracious, the Most Merciful. 

As-salāmu ‘alaykum wa-rahmatullāhi wa-barakātuh. 

سوالات کے جوابات بالترتیب درج ذیل ہیں:                                                 

 

1، 2. گونگا اور بہرا شخص کو دنیاوی خیالات آنے کی صورت میں، ان سے بچنے کے لئے ثناء، قراءت اور تسبیحات نماز کو عربی زبان کے اشاروں میں سوچنے اور ذہن میں لاناجائز ہے اورنماز کو خیالات سے بچانے کی وجہ سے ثواب کا مستحق بھی ہوگا - [1]

 

3. اگر آپ کا مطلب تسمیہ کے بنائے گئے اشاروں کو نماز کے اندر کرنا ہو تو یہ جائز نہیں ہے-  [2]  اور اگر آپ کا مطلب تسمیہ کے بنائے گئے اشاروں کو نماز کے باہر کرنا ہو تو یہ جائز  ہے اورتسمیہ پڑھنے کے برابر اجر و ثواب ملےگا ۔

 

4. فقہ اسلامی میں اشاروں کی زبان سیکھنے اور سیکھانے کے لۓ تو کوئی خاص قواعد و ضوابط نہیں ہیں- البتہ ایسے لوگوں کی تربیت کے لۓ مستقل ادارے ہیں جہاں اشاروں کی زبان سیکھایا جاتا ہے-

 

5. بہتر یہ ہے کہ علماء کرام یا مفتیان کرام سے مشورہ لیتے ہوئے بنایا جاۓ-

 

And Allah Ta’āla Knows Best

Rabiul Islam & Anas Sharieff Qasmi

 

Student Darul Iftaa
Detroit, Michigan, USA & Hyderabad, India  

Checked and Approved by,
Mufti Ebrahim Desai.



[1] { لَا يُكَلِّفُ اللَّهُ نَفْسًا إِلَّا وُسْعَهَا... } [البقرة: 286]

 

{فَاتَّقُوا اللَّهَ مَا اسْتَطَعْتُمْ... } [التغابن: 16]

 

صحيح البخاري (9/ 94-95 م: دار طوق النجاة)

 

96 - كتاب الاعتصام بالكتاب والسنة. باب الاقتداء بسنن رسول الله صلى الله عليه وسلم:

 

7288 - حدثنا إسماعيل، حدثني مالك، عن أبي الزناد، عن الأعرج، عن أبي هريرة، عن النبي صلى الله عليه وسلم، قال: «دعوني ما تركتكم، إنما هلك من كان قبلكم بسؤالهم واختلافهم على أنبيائهم، فإذا نهيتكم عن شيء فاجتنبوه، وإذا أمرتكم بأمر فأتوا منه ما استطعتم»

 

صحيح مسلم (2/ 975 م: دار إحياء التراث العربي - بيروت)

 

15 - كِتَابُ الْحَجِّ. 73 - بَابُ فَرْضِ الْحَجِّ مَرَّةً فِي الْعُمُرِ:

 

412 - (1337) وحَدَّثَنِي زُهَيْرُ بْنُ حَرْبٍ، حَدَّثَنَا يَزِيدُ بْنُ هَارُونَ، أَخْبَرَنَا الرَّبِيعُ بْنُ مُسْلِمٍ الْقُرَشِيُّ، عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ زِيَادٍ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ، قَالَ: خَطَبَنَا رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، فَقَالَ: «أَيُّهَا النَّاسُ قَدْ فَرَضَ اللهُ عَلَيْكُمُ الْحَجَّ، فَحُجُّوا»، فَقَالَ رَجُلٌ: أَكُلَّ عَامٍ يَا رَسُولَ اللهِ؟ فَسَكَتَ حَتَّى قَالَهَا ثَلَاثًا، فَقَالَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ: " لَوْ قُلْتُ: نَعَمْ لَوَجَبَتْ، وَلَمَا اسْتَطَعْتُمْ "، ثُمَّ قَالَ: «ذَرُونِي مَا تَرَكْتُكُمْ، فَإِنَّمَا هَلَكَ مَنْ كَانَ قَبْلَكُمْ بِكَثْرَةِ سُؤَالِهِمْ وَاخْتِلَافِهِمْ عَلَى أَنْبِيَائِهِمْ، فَإِذَا أَمَرْتُكُمْ بِشَيْءٍ فَأْتُوا مِنْهُ مَا اسْتَطَعْتُمْ، وَإِذَا نَهَيْتُكُمْ عَنْ شَيْءٍ فَدَعُوهُ»

 

المبسوط للسرخسي (1/ 217 م: دار المعرفة - بيروت) محمد بن أحمد بن أبي سهل شمس الأئمة السرخسي (المتوفى: 483هـ)

 

كتاب الصلاة. باب صلاة المريض: 

(فإن عجز عن القراءة تسقط عنه القراءة)

 

المحيط البرهاني في الفقه النعماني (2/ 149 م: دار الكتب العلمية، بيروت - لبنان) أبو المعالي برهان الدين محمود بن أحمد بن عبد العزيز بن عمر بن مَازَةَ البخاري الحنفي (المتوفى: 616هـ)

 

كتاب الصلاة. الفصل الحادي والثلاثون في صلاة المريض:

 

فإن عجز عن القراءة يومىء لغير قراءة؛ لأن القيام والركوع والسجود ركن كما أن القراءة ركن، ثم العجز عن تلك الأركان يسقط الأركان حتى يصلي مضطجعاً بالإيماء، فكذا العجز عن القراءة يسقط القراءة حتى يصلي بغير قراءة...

 

الدر المختار وحاشية ابن عابدين (رد المحتار) (1/ 481 م: دار الفكر-بيروت)

 

كتاب الصلاة. فصل في بيان تأليف الصلاة إلى انتهائها. فروع كبر غير عالم بتكبير إمامه:

 

(ولا يلزم العاجز عن النطق) كأخرس وأمي (تحريك لسانه) وكذا في حق القراءة هو الصحيح لتعذر الواجب، فلا يلزم غيره إلا بدليل فتكفي النية، لكن ينبغي أن يشترط فيها القيام وعدم تقديمها لقيامها مقام التحريمة ولم أره. ثم في الأشباه في قاعدة التابع تابع فالمفتى به لزومه في تكبيره وتلبية لا قراءة

 

الدر المختار وحاشية ابن عابدين (رد المحتار) (1/ 415 م: دار الفكر-بيروت)

 

كتاب الصلاة. باب شروط الصلاة. مطلب في ستر العورة:

 

...أن العاجز عن النطق لا يلزمه تحريك لسانه للتكبير أو القراءة في الصحيح...

 

الفتاوى الهندية - ط. دار الفكر (1/ 138) 

 

الباب الرابع عشر في صلاة المريض:

فإن عجز عن القراءة يومئ إيماء بغير قراءة...

 

الأشباه والنظائر لابن نجيم (ص: 91 م: دار الكتب العلمية،بيروت،لبنان)

 

السَّادِسَةُ: الْحَاجَةُ تَنْزِلُ مَنْزِلَةَ الضَّرُورَةِ، عَامَّةً كَانَتْ أَوْ خَاصَّةً،

وَمِنْ ثَمَّ جَازَ تَرْكُ الْوَاجِبِ دَفْعًا لِلْمَشَقَّةِ،

 

احسن الفتاوی (جلد: 3  ص: 29  مکتبہ: ایچ ایم سعید کمپنی) فقیہ العصر مفتی اعظم حضرت مفتی رشید احمد صاحب رحمہ اللہ

 

باب صفة الصلاة وما یتعلق بها:

گونگا نماز کیسے پڑھے؟

 

کتاب النوازل (جلد: 3 ص: 512-511  مکتبہ جاويد ديوبند) مولانا مفتی سید محمد سلمان صاحب منصور پوری نائب مفتی و استاذ حدیث جامعہ قاسمیہ مدرسہ شاہی مراد آباد  

 

كتاب الصلاة. قراءت کے مسائل:

گونگا شخس نماز کیسے پڑھے؟

کتاب المسائل (جلد: 1 ص: 295 کتب خانہ نعیمیّہ دیوبند) مولانا مفتی سید محمد سلمان صاحب منصور پوری نائب مفتی و استاذ حدیث جامعہ قاسمیہ مدرسہ شاہی مراد آباد  

 

نماز کے فرائض:

ان پڑھ اور گونگا کیسے نماز شروع کرے؟ اور دیکھیۓ صفحہ 301 پر-

 

کتاب الفتاوی (جلد: 2 صفحہ: 198-197 مکتبہ: زمزم پبلشرز) مولانا خالد سیف اللہ رحمانی

 

كتاب الصلاة. نماز میں قراءت.

گونگے اور قراءت: ملاحظہ ہو-

 

 

[2]   حاشية الطحطاوي على مراقي الفلاح شرح نور الإيضاح (ص: 322 م: دار الكتب العلمية بيروت - لبنان) أحمد بن محمد بن إسماعيل الطحطاوي الحنفي - توفي 1231 هـ

 

كتاب الصلاة. (باب ما يفسد الصلاة)

 

و يفسدها العمل الكثير لا القليل والفاصل بينهما أن الكثير هو الذي لا يشك الناظر لفاعله أنه ليس في الصلاة وإن اشتبه فهو قليل على الأصح وقيل في تفسيره غير هذا كالحركات الثلاث المتواليات كثير ودونها قليل...

•---------------------------------•.

قوله: "كالحركات الثلاث المتواليات كثير" حتى لو روح على نفسه بمروحة ثلاث مرات أو حك موضعا من جسده كذلك أو رمى ثلاثة أحجار أو نتف ثلاث شعرات فإن كانت على الولاء فسدت صلاته وإن فصل لا تفسد وإن كثر وفي الخلاصة وإن حك ثلاثا في ركن واحد تفسد صلاته إذا رفع يده في كل مرة وإلا فلا تفسد لأنه حك واحد اهـ وقيل ما يقام باليدين عادة كثير وإن فعله بيد واحدة وما يقام بيد واحدة قليل وإن فعله بيدين وقيل إن الكثير ما يكون مقصودا للفاعل والقليل بخلافه وقيل إنه مفوض إلى رأي المبتلي فإن استكثره فكثير وإن استقله فقليل وهذا أقرب الأقوال إلى رأي الإمام كما في التبيين...

 

الدر المختار وحاشية ابن عابدين (رد المحتار) (1/ 624 م: دار الفكر-بيروت)

 

(و) يفسدها (كل عمل كثير) ليس من أعمالها ولا لإصلاحها، وفيه أقوال خمسة أصحها (ما لا يشك) بسببه (الناظر) من بعيد (في فاعله أنه ليس فيها) وإن شك أنه فيها أم لا فقليل...

•---------------------------------•.

حاشية ابن عابدين: (قوله وفيه أقوال خمسة أصحها ما لا يشك إلخ) صححه في البدائع، وتابعه الزيلعي والولوالجي. وفي المحيط أنه الأحسن. وقال الصدر الشهيد: إنه الصواب. وفي الخانية والخلاصة: إنه اختيار العامة. وقال في المحيط وغيره: رواه الثلجي عن أصحابنا حلية.

 

القول الثاني أن ما يعمل عادة باليدين كثير وإن عمل بواحدة كالتعميم وشد السراويل وما عمل بواحدة قليل وإن عمل بهما كحل السراويل ولبس القلنسوة ونزعها إلا إذا تكرر ثلاثا متوالية وضعفه في البحر بأنه قاصر عن إفادة ما لا يعمل باليد كالمضغ والتقبيل.

 

الثالث الحركات الثلاث المتوالية كثير وإلا فقليل.

 

الرابع ما يكون مقصودا للفاعل بأن يفرد له مجلسا على حدة. قال في التتارخانية: وهذا القائل: يستدل بامرأة صلت فلمسها زوجها أو قبلها بشهوة أو مص صبي ثديها وخرج اللبن: تفسد صلاتها.

 

الخامس التفويض إلى رأي المصلي، فإن استكثره فكثير وإلا فقليل قال القهستاني: وهو شامل للكل وأقرب إلى قول أبي حنيفة، فإنه لم يقدر في مثله بل يفوض إلى رأي المبتلى. اهـ. قال في شرح المنية: ولكنه غير مضبوط، وتفويض مثله إلى رأي العوام مما لا ينبغي، وأكثر الفروع أو جميعها مفرع على الأولين. والظاهر أن ثانيهما ليس خارجا عن الأول، لأن ما يقام باليدين عادة يغلب ظن الناظر أنه ليس في الصلاة، وكذا قول من اعتبر التكرار ثلاثا متوالية فإنه يغلب الظن بذلك، فلذا اختاره جمهور المشايخ. اهـ.

 

 

DISCLAIMER - AskImam.org questions
AskImam.org answers issues pertaining to Shar'ah. Thereafter, these questions and answers are placed for public view on www.askimam.org for educational purposes. However, many of these answers are unique to a particular scenario and cannot be taken as a basis to establish a ruling in another situation or another environment. Askimam.org bears no responsibility with regards to these questions being used out of their intended context.
  • The Shar's ruling herein given is based specifically on the question posed and should be read in conjunction with the question.
  • AskImam.org bears no responsibility to any party who may or may not act on this answer and is being hereby exempted from loss or damage howsoever caused.
  • This answer may not be used as evidence in any Court of Law without prior written consent of AskImam.org.
  • Any or all links provided in our emails, answers and articles are restricted to the specific material being cited. Such referencing should not be taken as an endorsement of other contents of that website.